Fazayel-e-Jummah

Taj Daar-E-Haram Ae Shahinsha-E-Deen

Taj Daar-E-Haram Ae Shahinsha-E-Deen

Tum Pe Har Dum Croro Durud-O-Salam

Ho Nigah-E-Karam Hum Pe Sultan-E-Deen

Tum Pe Har Dam Croro Durud-O-Salam

****************************************

Dur Rah Kar Na Dum Toot Jae Kaheen

Kaash Taiba Me Ae Mere Mah-E-Mubeen

Dafn Hone Ko Miljae Do Gaz Zameen

Tum Pe Har Dum Croro Durud-O-Salam

****************************************

Koi Husne Amal Paas Mere Nahi

Phas Na Jaoon Qayamat Me Maula Kaheen

Ae Shafi-E-Umam Laaj Rakhna Tumheen

Tum Pe Har Dum Croro Durud-O-Salam

****************************************

Teri Yadaun Se Maamur Sina Rahe

Lab Pe Har Dum Madina Madina Rahe

Bas Mai Diwana Banjaun Sultan-E-Deen

Tum Pe Har Dum Croro Durud-O-Salam

****************************************

Phir Bulalo Madine Me Attar Ko

Ye Tadap Ta Hai Taiba Ke Deedar Ko

Koi Is Ke Siva Aarzoo Hi Nahi

Tum Pe Har Dam Croro Durud-O-Salam

****************************************

Allah key Mukarab Bandy

Sahaba Ki Fikr-e-Aakhirat

Ek Bazurg Ki Kahani

Zakat ki Adayegi

رمضان کی فضیلت و اہمیت

رمضان المبارک اسلامی تقویم کا نواں مہینہ ہے. قرآن و حدیث میں رمضان المبارک کو بہت اہمیت حاصل ہے.اور رمضان المبارک ہی وہ مہینہ ہے جس کا زکر قرآن مجید میں آیا ہے.

ارشاد ربانی ہے:

"رمضان کے مہینے میں قرآن مجید نازل کیا گیا”(البقرۃ: 185) "

"اس مہینے میں ایک رات (لیلۃ القدر) ایسی آتی ہے جو ہزار راتوں سے افضل و بہتر ہے”.(القدر: 3)

حضرت سلمان رضی اللہ تعالٰی عنہ روایت کرتے ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے شعبان کی آخری تاریخ کو فرمایا کہ تمھارے اوپر ایک مہینہ آ رہا ہے جو بڑا مبارک مہینہ ہے. اس میں ایک رات ہے جو ہزار مہینوں سے بڑھ کر ہے. اللہ تعالٰی نے اس ماہ کے روزے کو فرض اور اس رات میں قیام کو ثواب کی چیز بنایا. جو شخص اس مہینہ میں کسی نیکی کے ساتھ اللہ کا قرب حاصل کر لے وہ ایسا ہے جیسے غیر رمضان میں فرض ادا کیا اور جو شخص کسی فرض کو ادا کرے وہ ایسے ہے جیسے غیر رمضان میں ستر فرض ادا کرے. یہ مہینہ لوگوں کے ساتھ غمخواری کرنے کا ہے. اس مہینہ میں مومن کا رزق بڑھا دیا جاتا ہے.

ارشادِ باری تعالٰی ہے:

"اے ایمان والو! تم پر روزے فرض کر دئیے گئے ہیں جس طرح تم سے پہلے لوگوں پر فرض کیے گئے تھے، تا کہ تم متقی ہو جاؤ” (البقرۃ: 183)

ہمارے پیارے نبی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

"رُسوا ہوا وہ شخص جس کی قسمت میں رمضان کا مہینہ آیا اور اس نے عبادت کر کے اللہ سے اپنے کناہوں کو معاف نہیں کروا لیا”.

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالٰی عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ:

"جب رمضان کی پہلی رات ہوتی ہے تو شیاطین اور سرکش جنات قید کر دئیے جاتے ہیں اور دوزخ کے سارے دروازے بند کر دئیے جاتے ہیں، پھر اس کا کوئی دروازہ کھلا نہیں رہتا اور جنت کے تمام دروازے کھول دئیے جاتے ہیں پھر اس کا کوئی دروازہ بند نہیں رہتا اور اعلان کرنے والا فرشتہ یہ اعلان کرتا ہے کہ. اے بھلائی (یعنی نیکی و ثواب) کے طلبگار! (اللہ کی طرف) متوجہ ہو جا اور اے برائی کا ارادہ رکھنے والے! برائی سے باز آ جا کیونکہ اللہ تعالٰی لوگوں کو آگ سے آزاد کرتا ہے (یعنی اللہ تعالٰی اس ماہِ مبارک کے وسیلے میں بہت لوگوں کو آگ سے آزاد کرتا ہے اس لئے ہو سکتا ہے کہ تو بھی ان لوگوں میں شامل ہو جائے) اور یہ اعلان رمضان کی ہر رات کو ہوتا ہے”. (ترمذی و ابن ماجہ)